April 16, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/battlecreekrugby.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253
Members of the Russian military walk near a damaged building, in a location given as Avdiivka, Ukraine, in this screen grab obtained from a social media video released February 22, 2024. (Reuters)

بھارت کی وزارت دفاع نے جمعہ کے روز اس امر کی تصدیق کر دی ہے کہ اس کے شہری روپیہ کمانے کے چکر میں روسی فوج کا حصہ بنے ہیں۔ بیان کے مطابق اس وقت کم از کم 18 بھارتی روسی فوجیوں کے طور پر روسی محاذ پر موجود ہیں۔

واضح رہے بھارت کے شہری ہزاروں کی تعداد میں اسرائیل بھی بھجوانے کا فیصلہ خود بھارتی حکومت نے کیا ہے۔ تاہم یہ تعداد جانے والے بھارتی شہریوں کے مقابلے میں کہیں زیادہ ہے۔ اسرائیل میں بظاہر بھارتیوں کی آمد اسرائیلی حکومت کی طرف سے برطرف کیے گئے فلسطینی ملازمین کی جگہ لینے کے لیے طے پائی ہے مگر اس بارے میں حتمی طور پر کچھ نہیں کہا جا سکتا کہ ان کی ملازمت کی نوعیت محض سول کے شعبے میں رہے گی یا نہیں غزہ اور دوسرے محاذوں پر فوجیوں کے طور پر کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

تاہم روس کے لیے لڑنے والے بھارتیوں کے بارے میں بین الاقوامی سطح پر ذرائع ابلاغ بھارتیوں کے روسی فوج میں شامل ہو نے اور یوکرین کے خلاف لڑنے کی خبریں سامنے آنے لگی ہیں۔ اخبار کے مطابق کم از کم تین بھارتیوں کو روس کی طرف سے لڑنے پر مجبور کیا جا چکا ہے۔

تاہم بھارتی وزارت خارجہ بھارتیوں کے روس کے لیے کسی جنگی کردار کی ابھی تصدیق نہییں کی ہے۔ البتہ وزارت خارجہ کے بیان میں کہا گیا ہے کہ بھارت آگاہ ہے کہ اس کچھ شہریوں نے روسی فوج کی معاونت کےلیے ملازمت حاصل کی ہے۔ بھارتی وزارت خارجہ کی طرف سے یہ بھی کہا گیا ہے کہ بھارت روسی حکام کے ساتھ اس معاملے میں مسلسل رابطے میں ہے کہ ان بھارتیوں کو جلد برخاست کر دیا جائے۔’

بظاہر بھارتی شہریوں کے اس کردار پر بھارت کو سرکاری طور پر اعتراض ہے لیکن اس کا اظہار ان بھارتیوں کے کرائے کے فوجی بننے کے انداز میں بالکل نہیں کیا گیا۔ تاہم یہ سوال اپنی جگہ اٹھایا جارہا ہے کہ اگر بھارتیوں کا کردار کرائے کے فوجیوں کا نہیں ہے تو بھارت سرکار ان کی روس سے جلدی برخاستگی کا مطالبہ کیسے کر رہی ہے؟

وزارت خارجہ بھارت کی طرف سے یہ بھی کہا گیا ہے کہ بھارت نے شروع سے ہی اپنے شہریوں کو روس اور یوکرین کے تصادم سے دور رہنے کے لیے کہہ رکھا ہے۔

بھارتی اخبار ‘دی ہندو’ کی رپورٹ کے مطابق بھارتیوں کی روس میں یہ ملازمت دبئی میں قائم ایک بھرتی ادارے کے ذریعے ہوئی ہے جس نے انہیں روس میں بھاری تنخواہوں کی یقین دہانی کرائی۔ بتایا گیا ہے کہ ماسکو پہنچنے کے بعد ان بھارتیوں کو اسلحہ بارود کی روسی فوج نے تربیت دی تھی۔ پھر انہیں جنگی محاذ پر ماہ جنوری میں بھیج دیا گیا۔

اخبار کے مطابق بعض بھارتیوں نے اسی طرح کی ڈیل کے تحت یوکرین میں بھی خود کو رضا کار کے طور پر پیش کیا ہے۔ مگر یہ خبریں پہلے دوسری جانب سے ائی تھیں۔ خیال رہے اتنی بڑی ابادی کے ملک بھارت کی آبادی کو بیرون ملک اس طرح کی پیش کشین اس کے لوگوں کے لیے فطری طور پر بڑی مرغوب ہوتی ہیں کہ بھارت میں اپنے حالات بہتر بنانے کی خواہش ہر جگہ موجود ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *