April 16, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/battlecreekrugby.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253

ٹیلی ویژن اسٹیشن ہیبر ترک کے ایک جائزے کے مطابق منگل کو ترکی بھر میں سات خواتین کو ان کے ساتھیوں یا سابق ساتھیوں نے قتل کیا۔

ملک کے بڑے شہروں کی فہرست دیتے ہوئے ہیبر ترک نے رپورٹ کیا، “مجموعی طور پر ازمیر، بورصہ، سقاریہ، ارضروم، دینیزلی اور استنبول میں سات خواتین کو وحشیانہ طریقے سے قتل کیا گیا۔”

ناشر ادارے نے کہا جس نے اپنی ویب سائٹ پر متأثرہ خواتین کے نام ان کی تصاویر کے ساتھ درج کیے تھے، “مشتبہ افراد یا تو ان کے موجودہ شریکِ حیات تھے یا سابقہ جن سے وہ الگ ہو گئی تھیں۔”

32 تا 49 سالہ خواتین کو گولی مار کر یا چاقو سے قتل کیا گیا۔ حملہ آوروں میں سے کم از کم تین نے خود اپنی جانیں لے لیں، دو کو گرفتار کر لیا گیا اور ایک زخمی حالت میں دم توڑ گیا۔

ساتویں کے بارے میں تاحال کچھ معلوم نہیں جو اپنی بیوی کو قتل کرنے کے لیے جیل سے فرار ہوا تھا۔

2023 میں حقوقِ نسواں کی این جی او “ہم قتلِ نسواں روکیں گے” نے خواتین کے 315 قتل ریکارڈ کیے جن میں سے 65 فیصد کو انہی کےگھروں میں قتل کیا گیا۔

“مشتبہ اموات” کے اضافی 248 واقعات ہوئے جنہیں حکام نے “خودکشی” قرار دیا ہے لیکن جن کو حقوقِ نسواں کے گروپ انہیں کسی تیسرے فریق سے منسوب کرتے ہیں۔ گروپ نے ترکی میں کھڑکی سے پھینک/دھکا دے کر قتل کرنے کے واقعات میں اضافہ نوٹ کیا۔

ملک 2021 میں خواتین کے خلاف تشدد اور گھریلو تشدد کے انسداد اور مقابلہ کرنے سے متعلق کونسل آف یورپ کنونشن سے دستبردار ہو گیا تھا جسے استنبول کنونشن کہا جاتا ہے جس میں حکام کو خواتین کے خلاف تشدد کی تحقیقات اور سزا دینے کی ضرورت ہے۔

گروپ نے کہا، اس کے باوجود “15 سالوں میں واحد سال 2011 تھا جب قتلِ نسواں کی تعداد میں کمی واقع ہوئی جس سال استنبول کنونشن کو اپنایا گیا تھا۔”

2022 میں استنبول کے پراسیکیوٹر کی طرف سے “ہم قتلِ نسواں روکیں گے” کے خلاف مبینہ “غیر اخلاقی سرگرمیوں” پر دائر کردہ مقدمہ گذشتہ ستمبر میں خارج کر دیا گیا تھا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *